پاکستان میں آف روڈنگ کا ابھرتا ہواسلطان۔

کھیل انسان میں ولولہ ، جذبہ ،دلیری، ہمت، محنت، لگن، شوق، حوصلہ اور سب سے بڑھ کر برداشت جیسی صلاحیتوں کو اجاگر کرتا ہے جن، جہاں انسان جیت کی خوشی مناتا ہے وہیں ہار کر ایک نئی ہمت کے ساتھ دوبارہ جیتنے کی امید لگائے میدان میں اترتا ہے۔ ہر کھیل کی اپنی اہمیت اور خصوصیات ہوتی ہیں مگر وقت کے ساتھ ساتھ ہمارا طرز زندگی بدلنے سے کھیل بھی نت نئے متعارف ہوئے ان کھیلوں میں آف روڈ ریلی ایک منفرد اور جدا گانہ حیثیت کی حامل ہے جو کہ گھڑ دوڑ کی ایک ترقی یافتہ شکل ہے موٹر ریسنگ ایک مکمل ٹیم ورک کا نام ہے جس میں ڈرائیور کی مہارت، معاون ڈرائیور کی چستی، گاڑی کی تیاری، ٹریک کی جانچ پڑتال، دوران ریس گاڑی کی مرمت کا سامان اور اس طرح کے دیگر امورکے سبب اس کھیل میں مکمل ٹیم ورک کی ضرورت ہوتی ہے۔

دنیا میں آف روڈ ریلیوں کا انعقاد بہت بڑے پیمانے پر کیا جاتا ہے اس کھیل کے ذریعے پاکستان کا نام روشن کرنے کے لئے بہت سے درخشندہ ستارے موجود ہیں جو عالمی افق پر چھا جائیں گے ان میں سے ایک نام صاحبزادہ سلطان کا ہے جو 2015ء میں پاکستان کی موٹر اسپورٹس میں آئے اورچھا گئے، ان کا تعلق ایک صوفی گھرانے سے ہے، جو کہ گھڑ سواری میں ماہر اور نیزہ بازی میں یکتا ہیں، ایک حادثے کے باعث گھڑ سواری سے دور ہونا پڑا، لیکن اسی گھڑسواری کا شوق ان کو موٹر اسپورٹس کے قریب لایا اور دوسری ہی ریس میں پاکستان کے چیمپئن بن گئے اور پھر مڑ کر پیچھے نہیں دیکھا، 2016 میں پاکستان کے سب سے لمبے ، بڑے اورریتلے ٹریک پر اترے تو مقابلے میں نادر مگسی، رونی پٹیل جیسے بڑے نام تھے لیکن صاحبزادہ سلطان نے ریس جیت گئے اور "رفتار کے سلطان” کہلائے،

اس کے بعد گوادر ریلی کاانعقاد ہوا صاحبزادہ سلطان نے اس دشوار گزار اور مشکل ٹریک پر بھی سب کو پیچھے چھوڑا اوربڑے بڑے ریسرز کو پچھاڑ دیا، اور یوں رفتار کے سلطان کا تاج اپنے سر سجایااسکے بعد تھل کے ریگستان اور ایبٹ آباد کے پتھریلے ٹریک پر بھی اپنی کامیابی کے جھنڈے گاڑ دیئے۔

2017 کا سورج بھی صاحبزادہ سلطان کی کامیابی کا پیغام لے کر طلوع ہوا، گوادر ریلی میں ایکسیلیٹر پر ایسا پیر رکھا کہ گاڑی ہوا سے باتیں کرنے لگی، مدمقابل افراد کو پیچھے چھوڑا، اور فتح کی علامت بن گئے، پے درپے کامیابیاں صاحبزادہ سلطان کے روشن مستقبل کی ضمانت ہیں ساتھ اس کھیل میں پاکستان کا حقیقی ،مثبت اور پر امن چہرہ بھی عالمی سطح پر اس نوجوان کے ذریعے اجاگر ہوتا دیکھائی دے رہاہے۔

صاحبزادہ سلطان کی خواہش ہے کہ عالمی سطح پر بھی ریلیوں میں شرکت کر کے پاکستان کا نام روشن کریں ان کا کہنا ہے کہ اگر حکومت تعاون کرے تو عالمی سطح پر ہونے والی ریلی کاٹائیٹل پاکستان کے لئے جیت سکتے ہیں۔

مزید دیکھیں

متعلقہ مضامین