ماتحت خاتون اہلکار کی پپی لینے والا معطل اہلکار

ویسے تو عدالتوں میں انتہائی اہم نوعیت کے کیسز کی سماعت ہوتی ہے مگر اسلام آباد ہائی کورٹ میں ہوئی ایک ایسی سماعت جس کے چرچے سوشل میڈیا پر شروع ہو چکے ہیں. قصہ کچھ یوں ہے کہ ماتحت اے ایس آئ خاتون اہلکار کا بوسہ لینے کے الزام میں معطل ائر پورٹ سیکورٹی فورس کا افسر بحالی کے لئے اسلام آباد ہائی کورٹ پہنچ گیا. سماعت کا آغاز ہوا تو معطل افسر طارق لودھی نے بتایا کہ چار سال قبل ماتحت خاتون اہلکار کو بوسہ دینے کے الزام میں اسے معطل کیا گیا تھا جس کے بعد چا ر برس سے بطور سزا تنخواہ, اور الاؤنس رکے ہوئے ہیں.عدالت کے جج جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے درخواست گزار سے پوچھا تمہارا جرم کیا تھا؟ سر۔۔۔۔۔۔پپی کی تھی۔۔۔۔۔ درخواست گزار معطل اہلکار نے برجستہ جواب دیا تو ججز کے چہروں پر ہنسی کے آثار نمایاں ہوئے. ہنسی کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے جج نے پھر پوچھا اب تمہاری استدعا کیا ہے، عدالت سے کیا چاہتے ہو؟ سر جی، الاؤنس چاہتا ہوں۔۔۔۔۔درخواست گزار نے عاجزانہ اندار میں کہا.
الاؤنس تو تم پہلے ہی لے چکے، جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے جواب میں یہ ریمارکس دیا تو عدالت میں قہقہے گونج اٹھے.
عدالت نے مختصر سماعت کے بعد وزارت خزانہ کے جوائنٹ سیکریڑی کو اگلی سماعت پر طلب کر لیا.

مزید دیکھیں

متعلقہ مضامین