اصلی کپتان کون؟

اسلام آباد کے جوڈیشل کمپلیکس میں موجود عدالتوں میں آج دلچسپ صورت حال اس وقت پیدا ہوئی جب الگ الگ مقدمات میں دو کپتان پیش ہوئے۔ان میں سے ایک فوج کے ریٹائرڈ کپتان محمد صفدر جبکہ دوسرے قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان عمران خان تھے۔کیپٹن صفدر کو احتساب عدالت پیش ہونا تھا اور عمران خان کو انسداد دہشت گردی کی عدالت میں ۔اس دوران کیپٹن صفدر عدالت پہنچے تو صحافی عادل تنولی نے سوال داغ دیا کہ آج دو کپتان پیش ہو رہے ہیں ان میں سے اصلی کپتان کون ہے؟؟ سوال سنتے ہی کیپٹن صفدر نے برجستہ جواب دیا کہ وہ وردی والے کپتان ہیں جبکہ دوسرے (عمران خان) ٹریک سوٹ والے۔بات یہیں ختم نہیں ہوئی، کیپٹن صفدر مزید بولے کہ میں وہ کپتان ہوں جو ملک کی اندرونی سرحدوں کی حفاظت کر رہا ہوں اور جوانی میں بیرونی سرحدوں پر مورچہ سنبھال چکا ہوں،مگر دوسرے کپتان (عمران خان) نے نوجوانی میں کچھ اور موجیں اڑائی ہیں اور اب بڑھاپے میں کچھ اور موجیں اڑا رہے ہیں۔کیپٹن صفدر کے جاتے ہی عمران خان کی عدالت میں انٹری ہوئی تو صحافیوں نے وہی سوال ان سے دہراتے ہوئے کہا کہ کیپٹن صفدر آپ کو اصلی کپتان ماننے کو تیار نہیں۔جس پر عمران خان بے ساختہ مسکرا اٹھے اور صحافیوں سے بولے صبح صبح ہنسائیں تو مت۔جس پر عدالتی احاطے میں قہقہے گونج اٹھے۔

مزید دیکھیں

متعلقہ مضامین