مسلم لیگ نواز کو بڑادھچکا ! 5ارکان اسمبلی نے بغاوت کر دی

فیصل آباد کے دھوبی گھاٹ گراوٴنڈمیں حکومت مخالف ختم نبوت کانفرنس کے دوران مسلم لیگ نواز کے لئے خطرے کی گھنٹی بج گئی۔درگاہ سیال شریف کے پیر حمید الدین سیالوی کا (ن) لیگ سے تعلق توڑنے کا اعلان مسلم لیگ نواز کے لئے خطرناک ثابت ہوا اور پارٹی کے پانچ ارکان اسمبلی نے اپنی نشستوں سے استعفے کا اعلان کرتے ہوئے سیاسی مستقبل کافیصلہ پیرحمیدالدین سیالوی کے سپرد کر دیا ۔پیر حمید الدین سیالوی کے مطالبے کے باوجود انا ثنا اللہ کا استعفی نہ آنے پر 2اراکین قومی اسمبلی اور 3ارکان صوبائی اسمبلی سمیت متعدد بلدیاتی نمائندوں اور عہدیداروں نے مسلم لیگ نواز سے تعلق ختم کر نے کا اعلان کر دیا۔ن لیگ علماء مشائخ ونگ کے چیئر مین اور دربار گنج شکر پاکپتن کے جانشین دیوان احمد مسعود چشتی نے بھی ن لیگ کو الوداع کہ دیا۔مسلم لیگ نواز چھوڑنے والوں میں ن لیگی ایم این اے نثار جٹ، خاتون رکن قومی اسمبلی غلام بی بی بھروانہ، رکن پنجاب اسمبلی نظام الدین سیالوی، محمد خان بلوچ اور مولانا رحمت اللہ شامل ہیں۔قومی اسمبلی کی نشست چھوڑتے ہوئے نثار جٹ نے کہا کہ ختم نبوت پر ایمان رکھتا ہوں ، علماء اور مشائخ کی جانب سے رابطہ کرنے پر لبیک کہا ہے کہ آج کے بعد اپنی سیاست کااختیارحمیدالدین سیالوی کے حوالے کرتاہوں، خاتون رکن اسمبلی غلام بی بی بھروانہ نے کہا کہ حکومت وقت کے فیصلے مناسب نہیں ایسے وقت میں مزید ساتھ دے کر ایمان خراب نہیں ہونے دوں گی ،ختم نبوت پر استعفے ہی نہیں جان بھی قربان کرنے کو تیار ہیں ۔رکن پنجاب اسمبلی نظام الدین سیالوی بولے ختم نبوت پرہزارسیٹیں قربان کرنے کو تیارہوں مگر ختم نبوت پر سمجھوتہ نہیں کر سکتے۔ اس موقع پر حمید الدین سیالوی نے کہا کہ ووٹوں یا سیاست کی بات کرنے نہیں آیا، ختم نبوت اور ناموس رسالت کی خاطر گھروں سے نکلے ہیں۔انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ ملک میں نظام مصطفیﷺفوری نافذ کیا جائے۔فیصل آباد کے دھوبی گھاٹ گراوٴنڈ میں ہونے والی سیاسی ہل چل نے ن لیگ کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔تجزیہ کار اس اہم پیش رفت کو مسلم لیگ نواز کے لئے خطرے کی گھنٹی قرار دے رہے ہیں،نواز لیگ کی جانب سے صورت حال کو کنٹرول نہ کیا گیا تو پارٹی کو ایسے مزید دھوبی پٹکوں کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

مزید دیکھیں

متعلقہ مضامین